برازیل کے بڑے شہروں میں بندوق کی گولیوں کے باعث ہلاکتیں جیسے معمول بن چکی ہیں۔ اب ایسی کئی ایپس سامنے آرہی ہيں جو شہریوں کو تحفظ فراہم کرنے کے ساتھ حکام پر دباؤ بھی ڈال رہی ہيں۔

سترہ سالہ جولیا بورجس (Julia Borges) کو جس وقت گولی لگی، وہ اپنی بارہ سالہ کزن کی سالگرہ منانے اس کی گھر آئی ہوئی تھی۔ ایک آوارہ گولی تیسری منزل کی بالکونی پر کھڑی جولیا کی پیٹھ میں لگی، اور اس کے پھیپڑوں اور دل کی مرکزی رگ کے درمیان موجود پٹھوں میں پھنس گئی۔

جولیا کو فوری طور پر ہسپتال لے جایا گيا، اور ڈاکٹر اس کی جان بچانے میں کامیاب ہوگئے۔ تاہم ایسے کئی لوگ ہیں جو موقع پر ہی مارے جاتے ہيں۔ اس سال، برازیل کے شہر ریو میں اب تک 106 افراد آوارہ گولی لگنے کے باعث اپنی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں۔

Full article at MIT Tech Review’s Pakistan website. Date of publication: 13/12/2020

Deixe uma resposta

O seu endereço de e-mail não será publicado. Campos obrigatórios são marcados com *

Esse site utiliza o Akismet para reduzir spam. Aprenda como seus dados de comentários são processados.